Home / Bang e Dara / Poetry About Mountains | Abar-e-Kohsar |

Poetry About Mountains | Abar-e-Kohsar |

Poetry About Mountains by Allama Iqbal

Abar-e-Kohsar

Hai Bulandi Se Falak Bos Nasheman Mera
Abar E Kuhsar Hun Gul Pash Hai Daman Mera

Kabhi Sehra, Kabhi Gulzar Hai Maskan Mera
Sheher O Wirana Mera, Beher Mera, Ban Mera

Kisi Wadi Mein Jo Manzoor Ho Sona Mujh Ko
Sabza E Koh Hai Makhmal Ka Bichona Mujh Ko

Mujh Ko Qudrat Ne Sikhaya Hai Dur Afsan Hona
Naqa E Shahid E Rehmat Ka Hudi Khawan Hona

Ghamzada E Dil E Afsurda E Dehqan Hona
Ronaq E Bazm E Jawanan E Gulistan Hona

Ban Ke Gaisu Rukh E Hasti Pe Bikhar Jata Hun
Shana E Moja E Ser Ser Se Sanwar Jata Hun Mein

Door Se Didah E Umeed Ko Tersata Hun Mein
Kisi Basti Se Jo Khamosh Guzar Jata Hun

Saer Kerta Huwa Jis Dam Lab E Ju Aata Hun
Baliyan Neher Ko Gerdab Ki Pehnata Hun

Sabza E Mazere Nokhaiz Ki Umeed Hun Mein
Zadah E Beher Hun, Perwerdah E Khurshid Hun

Chasma E Koh Ko Di Shorish E Qulzum Mein Ne
Aur Perindon Ko Kiya Mehev E Tarannum Mein Ne

Ser Pe Sabze Ke Khare Ho Ke Kaha Qum Mein Ne
Gunchae Gul Ko Diya Zauq E Tabassum Mein Ne

Faiz Se Mere Namoone Hain Shabistanon Ke
Jhonpare Daman E Kuhsar Mein Dehqanon Ke

Allama Iqbal Poetry

——————————————————-

Poetry About Mountains

Poetry About Mountains in Urdu

ابر کوہسار

ہے بلندی سے فلک بوس نشيمن ميرا
ابرِ کہسار ہوں گل پاش ہے دامن ميرا
کبھی صحرا ، کبھی گلزار ہے مسکن ميرا
شہر و ويرانہ مرا ، بحر مرا ، بن ميرا

کسی وادی ميں جو منظور ہو سونا مجھ کو
سبزۂ کوہ ہے مخمل کا بچھونا مجھ کو

مجھ کو قدرت نے سکھايا ہے دُرافشاں ہونا
ناقۂ شاہدِ رحمت کا حُدی خواں ہونا
غم زدائے دِل افسردۂ دہقاں ہونا
رونقِ بزمِ جوانانِ گلستاں ہونا

بن کے گيسو رُخِ ہستی پہ بکھر جاتا ہوں
شانۂ موجۂ صرصر سے سنور جاتا ہوں

دور سے ديدۂ اميد کو ترساتا ہوں
کسی بستی سے جو خاموش گزر جاتا ہوں
سير کرتا ہوا جس دم لبِ جُو آتا ہوں
بالياں نہر کو گرداب کی پہناتا ہوں

سبزۂ مزرعِ نوخيز کی امّيد ہوں ميں
زادۂ بحر ہوں پروردۂ خورشيد ہوں ميں

چشمۂ کوہ کو دی شورشِ قلزم ميں نے
اور پرندوں کو کيا محوِ ترنّم ميں نے
سر پہ سبزہ کے کھڑے ہو کے کہا “قُم” ميں نے
غنچۂ گل کو ديا ذوقِ تبسم ميں نے

فيض سے ميرے نمونے ہيں شبستانوں کے
جھونپڑے دامنِ کہسار ميں دہقانوں کے

Funny Poetry in Urdu

Urdu Poetry

…………………

مشکل الفاظ کے معنی

ابر کوہسار: پہاڑ کا بادل، فلک بوس: آسمان کو چومنے والا، بہت بلند، نشیمن: ٹھکانا، مسکن، گل پاش: پھول بکھیرنے والا، گلزار: پھولوں کا باغ، بن: جنگل، سبزہ کوہ: پہاڑ پر اگا سبزہ، مخمل کا بچھونا: مراد، نرم آرام دہ بچھونا، درافشاں: موتی بکھیرنے والا، ناقہ: اونٹنی، شاہد رحمت: رحمت کا محبوب مراد رحمت، حدی خواں: قافلے کے اونٹوں کوتیز چلانے کیلئے خاص قسم کے اشعار پڑھنے والا، غم زدا: دکھ مٹانے والا، دل افسردہ: بجھا ہوا مایوس دل، دہقان: کسان، جوانان گلستان: مراد پھول، گیسو:زلفیں، سیاہ رنگ کر طرف اشارہ، رخ ہستی: زندگی/دنیا کا چہرہ، موجہ صرصر: آندھی کی لہر، سنور جانا: مراد سلیقے سے سمٹ جانا، دیدہ امید: وہ آنکھیں جو بارش کی آس لگائے ہوتی ہیں، لب جو: ندی کا کنارہ، بالیاں: جمع بالی، کانوں کے بندے، مزرع: کھیتی، نوخیز: نئی نئی اگی ہوئی، زادہ بحر: سمندر کی اولاد، پروردہ خورشید: جسے سورج نے پالا ہو، شورش قلزم: سمندر کا سا اونچا شور، محو ترنم: مرا دچہچانے میں مصروف، قم: اٹھ کھڑا ہو، ذوق تبسم: مسکرانےیعنی کھلنے کا شوق، شبستانوں: جمع شبستان، رات گذارنے کا جگہیں، دامن کوہسار: پہاڑ کا پہلو،

————————–

Check Also

Makra Aur Makhi

Makra Aur Makhi

Makra Aur Makhi in English and Urdu Aik Makra Aur Makhi (Makhooz) – Bachon Ke …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *